Independence Day of Pakistan on August 14 is a “Black Day” for Balochistan?

0
428
Balochistan
Balochistan

Quetta (Press Release) 14 August 20202:

Free Balochistan Movement released to the media
He said in his statement that the so-called independence of Pakistan on August 14 which the Baloch nation has been celebrating as “Black Day” and this process will continue till the formation of the state of independent Balochistan.

August 14 is a symbol of slavery in the history of occupied Balochistan. The Baloch as a nation and Balochistan as a separate country from this day onwards have no relation of any kind in the context of civil, legal, moral, social, political and historical realities except the occupier and the occupier.

Pakistan, an artificial and unnatural identity created by British imperialism for its own strategic interests, was created by the rulers of the time to serve their own interests, which has gradually proved destructive to all humanity and world peace.

Falsely claiming to be the stronghold of Islam, the Punjabi occupying army has inflicted as much bloodshed and destruction in Muslim countries in its seventy-seven year history as hardly anyone else has done in such a large number and in such a short period of time.

A spokesman for the Free Balochistan Movement said that after its inception, Pakistan violated international law by marking the Baloch independent state as a nightmare. According to international law, in case of violation of one country’s borders by another, the United Nations The aggressor country is interrogated and forced to stop the attack. A clear example of this is the strong notice of the world powers during Iraq’s occupation of Kuwait and the forced repulsion of Iraq. We find in the history of the world, but Pakistan on March 27, 1948 If an independent Baloch invades the homeland, then the United Nations, neglecting its responsibilities, leaves the Baloch people at the mercy of a bloody wolf like Pakistan. Unfortunately, our neighbors and brotherly countries also kept their eyes closed during Pakistan’s invasion of Balochistan. Today, after 73 years, these countries are suffering the consequences of their silence during the occupation of Balochistan, where the Pakistani ISI and the army are engaged in an undeclared war against them through their own proxies.

Highlighting the historically separate status of Pakistan and Balochistan, the Free Balochistan Movement said that the Baloch nation has been expressing complete disengagement from August 14, considering it a self-made and artificial day imposed by the enemy. It has been building false bridges to publicize its imperialist plans and has been trying to mislead the outside world and the Baloch nation by mixing Baloch patriotism with Pakistanism.

Every conscious person of the Baloch nation is fully aware of the fact that the flag of Pakistan occupying their motherland Balochistan is an ugly symbol of slavery for them, and the blood stains of the Baloch martyrs are clearly visible in this flag. Those who raise this flag out of ignorance or greed and fear should think carefully that Baloch and Punjabi customs, culture and
Civilizations are completely separate. The history of Baloch is a testimony to the fact that our forefathers have never surrendered to foreign invaders. Now, if a Baloch is misled by the Punjabi army from the Baloch national mainstream and made ignorant, then this Baloch National history and the sacrifices of our national martyrs will never be harmonized. Today, if the Punjabi people or their elites do not recognize the 9000-year-old national identity and flag of the Baloch, why should the Baloch make the mistake of accepting the 73-year-old artificial history?

The Punjabi generals who used to scare people away like sheep and goats during the Punjabi celebrations on August 14 and read these graffiti should read the graffiti that the freedom, dignity and security of nations, their history, language, culture, way of life and Recognizing their national identity and sovereignty over geography. When a nation is busy with the funerals of their loved ones, parents stumble in front of press clubs for years to recover their forcibly abducted youth, military aggression continues in every street neighborhood, a mutilated house The corpse is being sent, the curse of drugs should be stopped by snatching the pen from the hands of the youth, the rich Baloch nation should be made needy by nature by nature, our chador wall is being trampled every day, leaving home and returning alive in the evening. The fear of not coming stays like a shadow, during the journey when our mothers and sisters are subjected to humiliating searches in dozens of military check posts, when our elders and the elderly who walk with sticks are also beaten in broad daylight, The mother of our innocent daughter “Burmash” should be roasted with the bullets of the ISI-raised death squad, the educated and peaceful political activists who preached our freedom should be martyred by torturing them in prisons, our people Mass graves should be sacrificed, our livestock should be deliberately killed and standing crops should be destroyed. He said that education should be made ashes for our children by burning them to ashes, Pakistan Army should take our youth from their homes and use kidnapping as a collective punishment for the whole family. What kind of freedom is this if our national leaders and the general public are being targeted indiscriminately? Ignoring the state terrorism of Occupied Pakistan in this turbulent and war-torn region, every conscious Baloch considers it a national duty and a national duty to participate in their fabricated ceremonies, insulting their self-esteem and staying away from these ceremonies.

*** This information is shared under the freedom of Expression, IBG NEWS not agreed or disagreed to the views expressed. This is a google translation of original Urdu text press release, IBG NEWS can not confirm the correct translation of the system generated information Please NOTE: follow FBM on twitter via their official twitter handle @freebalochmovt .***

Original Urdu statement:

کوئٹہ ( پریس ریلیز ) فری بلوچستان موومنٹ نے میڈیا کو جاری کردہ
اپنے بیان میں کہا کہ 14 اگست پاکستان کی نام نہاد آزادی جس کو بلوچ قوم “یوم سیاہ” کے طور پر مناتی آ رہی ہے اور یہ سلسلہ آئندہ بھی آزاد بلوچستان کی ریاستی تشکیل تک جاری رہیگا۔

14 اگست مقبوضہ بلوچستان کی تاریخ میں غلامی کی علامت کے طور پر اپنا وجود رکھتا ہے۔ بلوچوں کا بحیثیت قوم اور بلوچستان کا بحیثیت ایک علیحدہ ملک اس دن سے کوئی عمرانی، قانونی، اخلاقی، سماجی، سیاسی اور تاریخی حقائق کے تناظر میں کسی قسم کا کوئی بھی تعلق نہیں سوائے قابض اور مقبوضہ کے۔

برطانوی سامراج کی اپنے اسٹریٹجک مفادات کی خاطر تخلیق کردہ پاکستان جو کہ ایک مصنوعی اور غیر فطری شناخت ہے کو اس وقت کے حکمرانوں نے اپنے مفادات کی بجاآوی کے لیے قائم کیا جو رفتہ رفتہ ساری انسانیت اور عالمی امن کے لیے تباہ کن ثابت ہوچکا ہے۔

اسلام کا قلعہ ہونے کے جھوٹے دعویدار پنجابی قابض فوج نے اپنی تہتر سالہ تاریخ میں مسلمان ممالک میں جتنی خونریزی اور تباہی برپا کی ہے شائد ہی کسی اور نے اتنی بڑی تعداد اور اتنے کم عرصہ میں کی ہو۔

فری بلوچستان موومنٹ کے ترجمان نے کہا کہ پاکستان نے اپنے وجود میں آنے کے بعد بلوچ آزاد مملکت پر شب خون مارکر عالمی مروجہ قوانین کی دھجیاں اڑادیں۔بین القوامی قوانین کے مطابق ایک ملک کا دوسرے ملک کی سرحدوں کی خلاف ورزی کی صورت میں اقوام متحدہ حرکت میں آ کر جارحیت کرنے والے ملک سے باز پرس کی جاتی ہے اور اسے وہ حملہ روکنے پر مجبور کیا جاتا ہے۔ اس کی واضح مثال عراق کی کویت پر قبضے کے وقت عالمی طاقتوں کے سخت نوٹس اور عراق کو مجبور کرکے پسپا کرنا دنیا کی تاریخ میں ہمیں ملتی ہے، لیکن پاکستان 27 مارچ 1948 کو جب بھاری توپ خانے اور فوج کے ہمراہ بلوچستان کی آزادی سلب کرنے کے لئے آزاد بلوچ وطن پر حملہ آور ہوتا ہے تو اقوام متحدہ اپنی ذمہ داریوں سے غافل ہوکر بلوچ عوام کو ایک خونخوار بھیڑیئے جیسے ملک پاکستان کے رحم و کرم پر چھوڑ دیتا ہے۔ بدقسمتی سے ہمارے ہمسائے اور برادر ممالک نے بھی پاکستان کی بلوچستان پر حملے کے دوران اپنی آنکھیں بند کئے رکھیں۔ یہ ممالک آج تہتر (73) سال بعد بلوچستان پر قبضہ کے دوران اپنی خاموشی کا خمیازہ بھگت رہے ہیں جہاں پاکستانی آئی ایس آئی اور فوج ان کے خلاف اپنے پالے ہوئے پراکسیز کے ذریعے غیراعلانیہ جنگ میں مصروف ہے۔

فری بلوچستان موومنٹ نے پاکستان اور بلوچستان کی تاریخی جداگانہ حیثیت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ بلوچ قوم 14 اگست کو دشمن کا مسلط کردہ ایک خود ساختہ اور مصنوعی دن سمجھتے ہوئے اس دن سے مکمل لاتعلقی کا اظہار کرتی رہی ہے، کیونکہ اس دن پاکستانی ریاست اپنی سامراجی منصوبوں کی تشہیر کے جھوٹی پل باندھتی ہے اور بلوچ حب الوطنی کو پاکستانیت میں ملاوٹ کے ذریعے بیرونی دنیا اور بلوچ قوم کو گمراہ کرنے کی کوشش کرتی رہی ہے۔

بلوچ قوم کا ہر باضمیر وباشعور فرد اس حقیقت سے مکمل واقف ہے کہ ان کی مادر وطن بلوچستان پر قابض پاکستان کا پرچم ان کے لیے غلامی کی بدنما علامت، اور اس پرچم میں بلوچ شہدا کے لہو کے دھبے واضح دکھائی دیتے ہیں۔ اس پرچم کو نادانی یا لالچ و خوف سے اٹھانے والوں کو بغور سوچنا چاہیے کہ بلوچ اور پنجابی کی رسم و رواج، ثقافت اور
تہذیب مکمل جدا ہیں۔ بلوچ کی تاریخ اس بات کی گواہ ہے کہ ہمارے آبا و اجداد نے کبھی بھی بیرونی غاصبوں کے سامنے سرتسلیم خم نہیں کیا ہے، اب اگر کسی بلوچ کو پنجابی فوج بلوچ قومی دھارے سے بھٹکا کر نادان بنا کے پنجابیت کا درس دیتا ہے تو یہ بلوچ قومی تاریخ اور ہمارے قومی شہدا کی قربانیوں سے ہم آہنگ عمل ہر گز نہیں ہوگا۔ آج اگر پنجابی عوام یا ان کی اشرافیہ بلوچوں کی 9000 سالہ پرانی قومی شناخت اور پرچم کو تسلیم نہیں کرتا تو بلوچ کیوں 73 سالہ مصنوعی تاریخ کو قبول کرنے کی غلطی کرے؟

14 اگست کے پنجابی تقریبات میں لوگوں کو ڈرا دھمکاکر بھیڑ بکریوں کی طرح ہانک کر لے جانے اور ان کافوٹو سیشن کرنے والے پنجابی جرنیلوں کو نوشتہ دیوار پڑھ لینی چاہئے کہ قوموں کی آزادی وقار اور سلامتی ان کے تاریخ، زبان، ثقافت، رہن سہن اور جغرافیہ پر ان کے قومی شناخت اورخودمختاری کو تسلیم کرنے کا نام ہے۔ جب ایک قوم اپنے پیاروں کے جنازوں میں مصروف عمل ہو، والدین اپنے جبری اغواشدہ نوجوانوں کی بازیابی کے لیے پریس کلبوں کے سامنے سالہا سال سے دربدر کی ٹھوکریں کھاتے پھریں، ہر گلی محلے میں روز فوجی جارحیت جاری ہو، ہر گھر میں ایک مسخ شدہ لاش بھیجی جارہی ہو، نوجوانوں کے ہاتھ سےقلم چھین کر منشیات کی لعنت تھما دی جائے، قدرت کی طرف سے امیر بلوچ قوم کو نان شبینہ کا محتاج بنادیا جائے، ہماری چادر چاردیواری ہر روز پامال کی جارہی ہو، گھر سے نکلتے ہوئے شام کوزندہ لوٹ نہ آنے کا ڈر اور خوف سائے کی طرح ساتھ رہے، دوران سفر جب ہماری مائیں بہنیں درجنوں فوجی چیک پوسٹوں میں ذلت آمیز تلاشی سے گزاری جائیں، جب لاٹھیوں کے سہارے چلنے والے ہمارے بزرگ اور بوڑھوں کو بھی دن دھاڑے زد و کوب کیا جائے، ہمارے معصوم بچی “برمش” کی ماں کو آئی ایس آئی کے پالے ہوئے ڈیتھ اسکواڈ کی گولیوں سے بھون دیا جائے، ہماری آزادی کا پرچار کرنے والے پڑھے لکھے پرامن سیاسی کارکنوں کو جیلوں میں انسانی سوز اذیت دے کر شہید کردیا جائے، ہمارے لوگوں کو اجتماعی قبروں کی نذر کردیا جائے، ہماری مال مویشیوں کو جان بوجھ کر ہلاک کردیا جائے اورکھڑی فصلوں کو آگ لگاکر راکھ بنادیا جائے، ہمارے بچوں کیلئے تعلیم کو شجر ممنوعہ بنادیا جائے، پاکستان آرمی ہمارے نوجوانوں کو گھروں سے اٹھاکر جبری اغوا کاری کو پورے خاندان کیلئے بطور اجتماعی سزا کے استعمال کرے۔ ہمارے قومی رہنماوں اور عام عوام کو بلا امتیاز نشانہ بنایا جارہا ہو تو یہ کیسی آزادی ہے؟ اس دگرگوں اور جنگ زدہ خطے میں قابض پاکستان کی ریاستی دہشت گردی کو نظر انداز کرکے ان کے بناوٹی تقریبات میں شرکت کرنے کو ہر ذی شعور بلوچ اپنی عزت نفس کی توہین اور ان تقریبات سے بیگانگی اور دور رہنے کو قومی آگاہی اور قومی فرض سمج

***As received from FBM***