Free Balochistan Movement says Pakistan has lost its moral, political, and legal legitimacy

0
387
A Baloch mother bought new shoes, new cloths for her son, is kept in Punjabi Pakistan army and ISI torture cells, she waited for his recovery but he is not released. Now she came with all those cloths and shows and displayed them in hunger strike camp to ask the world Where is the UN and other human rights champions?
A Baloch mother bought news shoes, new cloths for her son, is kept in Punjabi Pakistan army and ISI torture cells, she waited for his recovery but he is not released. Now she came with all those cloths and shows and displayed them in hunger strike camp to ask the world Where is the UN and other human rights champions?

QUETTA: The main spokesperson of the Free Balochistan Movement (FBM) has said in a statement issued to the media that Pakistan has lost its moral, political, and legal legitimacy during the last two decades. In order to maintain their control through state power, the occupying state army and its secret service ISI from different cities of occupied Balochistan forcibly abducted thousands of Baloch children from some areas at different times and kept them in military torture chambers.

What is? In recent days, while continuing the series of Baloch genocide, 5 Bugti Baloch children have been martyred by the CTD force of Punjab Police by firing on them a day before Eid, a festival of religious happiness. The abducted Bugti Balochs were accused by Pakistani state forces of being armed insurgents by dumping their bodies with blood on their bodies with government guns and issuing an official statement in their media saying that the Punjab CTD Force Has killed five Baloch insurgents in a police encounter, a statement that contradicts the ground realities and is based on lies.

The names and details of those who have been martyred by the Punjabi Police CTD are as follows.

Dost Muhammad Bugti from Karachi eight months ago, Ghulam Hussain Bugti from Kandhkot five months ago, Master Ali Bugti from Rajanpur on November 6 last year, Ramzan Bugti from Putt Feeder area of ​​Dera Bugti a year ago and Ata Muhammad Bugti from He was abducted and forcibly abducted by Pakistani forces in the Punjab city of Bahawalpur a year ago.

The party spokesperson further said in the statement that the state judiciary has completely failed in the manner in which the state institutions in occupied Balochistan are inflicting atrocities on the subjugated civilians, while the electronic and print media here are positive. And the role of impartiality, which is an equal partner in covering up the crimes of the state forces, is also gone.

In addition, the FBM said in a statement on Thursday that the FC had directly targeted unarmed civilians in the Afghan border town of Chaman Badar on the orders of Colonel Suleiman of the Pakistan Army to end a two-and-a-half-month peaceful Pashtun public protest by force. Tear gas shells were also fired, as a result of which 35 people have been injured so far, 9 people have been martyred, including a woman and 2 innocent children. The condition of 12 of the 35 injured is said to be critical.

Are FBM shares the grief of the families of all the Pashtun martyrs who were martyred in the unprovoked firing on the Pashtun people in Spain Boldak by the Punjabi Army on the happy days of Eid-ul-Adha on behalf of the Baloch nation. And it is as clear as day that the Baloch and the Pashtun nation will have to endure tragedies like the martyrdom of the Baloch sons of Spain Boldak and Dera Bugti until both nations are liberated from this occupying state.

Will be in such a dire situation, the oppressed and downtrodden Baloch and Pashtun people of Pakistan need to protect themselves from state terrorism and ensure the protection of human rights here. Urges the UN to make this unrestrained UN member state bound by the International Charter of Human Rights so that it does not use state power against civilians. In this way, the United Nations can fulfill its political and moral responsibilities and save the region from any further major humanitarian crisis.

The spokesman strongly condemned the martyrdom of 5 Baloch children from Dera Bugti at the hands of Punjabi CTD and direct state firing on unarmed Pashtun people at Chaman Spain-Boldak border and urged the United States, Europe and NATO member countries. He said that a war crimes case should be filed against the Pakistani state and it should be brought before the International Court of Justice so that the region could be saved from any major human rights crisis in the future.

At the end of his statement, the spokesman stressed that international bodies and neighboring countries should fulfill their responsibilities by providing moral and political support to the formation of Baloch, Sindhi and Pashtun nation-states like other nation-states.

Approximate Translation from Original Urdu message shared by FBM Media. See below original message below. For any clarification reach to FBM through Social Media or any official route of FBM. The world must fight against COVID-19, but what about the human rights of Baloch people.

کوئٹہ ( پریس ریلیز ) فری بلوچستان موومنٹ کے مرکزی ترجمان نے میڈیا کو جاری کردہ اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ پچھلے دو دہائیوں سے جاری موجودہ بلوچ قومی تحریک آزادی کے دوران پاکستان ماضی کی طرح حال میں بھی اپنی اخلاقی ، سیاسی اور قانونی جواز کھو کر ریاستی طاقت کے زریعئے اپنی قبضہ کو برقرار رکھنے کیلئے  مقبوضہ بلوچستان کے مخلتف شہروں سے قابض ریاستی فوج اور اس کے خفیہ ادارہ آئی ایس آئی نے مختلف اوقات میں بعض علاقوں سے  ہزاروں بلوچ فرزندوں کو جبری اغوا کرکے ان کو فوجی ازیت خانوں میں پابند سلاسل کیا ہیں۔ جن میں حالیہ دنوں بلوچ نسل کشی کی سلسلہ کو جاری رکھتے ہوئے 5 بگٹی بلوچ فرزندوں کو  مزہبی خوشی کے تہوار عید سے ایک دن قبل پنجاب پولیس کے سی ٹی ڈی فورس نے فائرنگ کرکے ماورائے عدالت ان کو قتل کرکے شہید کیا ہے۔ ان مغوی بگٹی بلوچوں کو پاکستان کے ریاستی فورسز سرکاری بندوق کے زریعئے گولیوں سے ان کے جسم کو خون آلود کرکے لاشیں پھینک کر ان پر مسلح مزاحمتکار ہونے کا الزام لگا کر اپنے میڈیا میں سرکای بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب کے سی ٹی ڈی فورس نے پانچ بلوچ مزاحمت کاروں کو پولیس مقابلے میں مارا ہے جو کہ زمینی حقائق کے کلیتا برخلاف اور جھوٹ پر مبنی بیان ہے۔جن افراد کو پنجابی پولیس سی ٹی ڈی نے فائرنگ کرکے شہید کیا ہے ، ان کے نام اور تفصیلات درجزیل ہیں ۔ دوست محمد بگٹی کو آٹھ مہینے قبل کراچی سے، غلام حسین بگٹی کوپانچ ماہ قبل کندھ کوٹ سے، ماسٹر علی بگٹی کو گذشتہ سال چھ نومبرکو راجن پور سے، رمضان بگٹی کو ایک سال قبل ڈیرہ بگٹی کے علاقے پٹ فیڈر سے اورعطا محمد بگٹی کو ایک سال قبل پنجاب کے شہر بہاولپور سے پاکستانی فورسز نے گرفتار کر کے جبری طور اغوا کیا تھا۔پارٹی ترجمان نے اپنے بیان میں مزید کہا کہ مقبوضہ بلوچستان میں پاکستان کے ریاستی اداروں کی جانب سے محکوم سویلین پر ظلم و بربریت جس طریقے سے ڈھایا جارہا ہے اس دوران  ریاستی عدلیہ مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے ، جبکہ یہاں الیکٹرانک و پرنٹ میڈیا کی مثبت و غیر جانبدارانہ کردار بھی ختم ہوکر رہ گئی ہے ، جو کہ ریاستی فورسز کے جرائم پر پردہ ڈالنے میں برابر کے شریک ہے۔اس کے علاوہ ایف بی ایم نے اپنے بیان میں گزشتہ روز بروز جمعرات افغانستان کے سرحدی شہر چمن باڈر پر پاکستانی فوج کے کرنل سلیمان کے حکم پر ڈھائی مہینے سے پرامن پشتون عوامی احتجاج کو بزور طاقت ختم کرنے کیلئے نہتے شہریوں پر ایف سی نے برائے راست فائرنگ کرکے آنسوں گیس کے شیل بھی فائر کیئے ، جس کے نتیجے میں اب تک کی اطلاعات کے مطابق 35 افراد زخمی 9 افراد شہید جن میں ایک خاتون سمیت 2 معصوم بچے  بھی شامل ہیں ، 35 زخمیوں میں سے 12 کی حالت نہایت ہی  تشویشناک بتائی جارہی ہیں۔ ایف بی ایم بلوچ قوم کی جانب سے عیدالضحی کے خوشی کے دنوں میں پنجابی فوج کی طرف سے اسپین بولدک میں پشتون عوام پر بلا اشتہال  فائرنگ سے شہید ہونے والے تمام پشتون شہدا کے لواحقین کے غم میں برابر کی شریک ہے۔اور یہ بات بھی روز روشن کی طرح واضع ہے کہ بلوچ اور پشتون قوم کو اسپین بولدک اور ڈیرہ بگٹی سے تعلق رکھنے والے بلوچ فرزندوں کی شہادت جیسے سانحات کو اس وقت تک برداشت کرنا پڑیگا جب تک اس قابض ریاست سے دونوں قوموں کی جان خلاصی نہیں ہوگی۔ ایسے گھمبیر  صورتحال میں مظلوم ومحکوم بلوچ و پشتون عوام پاکستان کے ریاستی دہشتگردی سے خود کو معفوظ رکھنے اور یہاں انسانی حقوق کی تحفظ کو یعقینی بنانے کیلئے بین الاقوامی انسانی حقوق کے معتبر اداروں ایمنسٹی انٹرنیشنل ، ہیومن رائٹس واچ، ایچ آر سی پی اور یونائیٹڈ نیشن سے اپیل کرتے ہے کہ وہ یواین کے اس بے لگام ممبر ملک کو انسانی حقوق کے بین القوامی چارٹر کا پابند بنایا جائے تاکہ وہ ریاستی طاقت کو عام سویلین کے خلاف استعمال نہ کرسکے۔ جس سے مظالم کے شکار محکوم عوام کو تعفظ کا احساس دلایا جاسکے۔اس عمل سے اقوام متحدہ اپنی سیاسی و اخلاقی زمہداریوں کو پورا کرکے اس خطے کو مزید کسی بڑے انسانی بحران سے بچایا جا سکتا ہے۔ ترجمان نے ڈیرہ بگٹی سے تعلق رکھنے والے 5 بلوچ فرزندوں کی پنجابی سی ٹی ڈی کے ہاتھوں شہادت اور چمن اسپین بولدک سرحد میں نہتے پشتون عوام پر برائے راست ریاستی فائرنگ کی شدید الفاظ میں مزمت کرتے ہوئے امریکہ یورپ اور نیٹو کے ممبر ممالک پر زور دیتے ہوئے کہا کہ وہ پاکستانی ریاست پر جنگی جرائم کا کیس دائر کرکے اسے عالمی عدالت انصاف کے سامنے پیش کیا جائے ، تاکہ مستقبل میں اس خطے کو انسانی حقوق کے حوالے سے مزید کسی بڑے بحران سے بچایا جاسکے۔ ترجمان نے اپنے بیان کے آخر میں اس بات پر زور دیتے ہوئے کہا بین القوامی ادارے و ہمسایہ ممالک دوسرے قومی ریاستوں کی طرح بلوچ ، سندھی اور پشتون  قومی ریاستوں کے تشکیل کی اخلاقی و سیاسی حمایت کرکے اپنی زمہ داریاں پوری کرے ۔